Baawri Piya Ki (Mubashra Ansari) / باوری پِیا کی از مُبشرہ انصاری

May 9, 2019
Baawri Piya Ki (Mubashra Ansari)

باوری پِیا کی از مُبشرہ انصاری
پیش لفظ!
محبت کہنے میں پڑھنے میں اور سننے میں بظاہر چار حرفی لفظ ہے۔ مگر اس ایک لفظ میں اک جہاں بسا ہوا ہے۔ اس جہاں میں ستم کی لال آندھیاں بھی ہیں اور دلی سکون پہنچاتی ہوائیں بھی۔۔۔۔ کہیں غموں کی پھوار ہے تو کہیں خوشیوں کی برسات ہے… کہیں خاموشیوں کی صدائیں ہیں تو کہیں گنگناتی ہوائیں ہیں…. اس ایک لفظ میں بہت کچھ پوشیدہ ہے۔ ہمیں نہیں معلوم کہ اس ایک لفظ کے سمندر میں ہمارے لئے کیا سبق پوشیدہ ہے ہم تو بس اس ایک لفظ سے متاثر ہو کر آنکھیں موندے کامل یقین سے اس محبت کے سمندر میں غوطہ لگا دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر کیا حاصل اور کیا لاحاصل………..؟ محبت مہربان ہو جائے تو ہر موسم بہار کا موسم لگتا ہے۔ اور اگر محبت بے مروت نکلے تو انسان اس قدر ٹوٹ کر بکھر جاتا ہے کہ ان ٹوٹے ٹکڑوں کے آر پار سے ہماری گھائل روح تک دیکھائی دینے لگتی ہے… اور یہ روح صرف اسی کو دیکھائی دیتی ہے جو صاحب نظر ہو…………. جوزِی حس ہو……….
خاموش چهره، خاموش لفظ کی طرح صاحب نظر انسان کے سامنے بولتا ہے۔ خاموشی خود گویائی ہوتی ہے۔ صاحب نظر سکوت سے ہمکلام ہوتا ہے۔ صاحب نگاہ کے سامنے، فاصلے، فاصلے نہیں رہتے……. زماں و مکاں کی وسعتیں انکی چشم بینا کے سامنے سمٹ کی جاتی ہیں………….
غم زندگی، غم بندگی، غم دو جہاں
میری ہر نظر تیری منتظر، تیری ہر نظر میرا امتحاں
“باوری پِیا کی” کہانی ہے محبت کی، اعتبار کی، انتظار کی، ٹوٹے بکھرے جذبوں کی، دو گھائل دلوں کی کہانی، دو گھائل دل جب آپس میں ملتے ہیں تو اک دوجے کیلئے بے حد مخلص ہوتے ہیں…. اپنی بے لوث محبت اک دوجے پر نچھاور کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ بات تو طے ہے کہ محبت کوشش یا محنت سے حاصل نہیں ہوتی………… یہ عطا ہے بلکہ یہ بڑے ہی نصیب کی بات۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

No Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *