Dil-e-Wehshi (Ibn-e-Insha) / دلِ وحشی از اِبنِ انشا
Ibn-e-Insha , poetry / March 5, 2019

Dil-e-Wehshi (Ibn-e-Insha) دلِ وحشی از اِبنِ انشا Shahr-e-Dil ki Galiyon Mein Shahr-e-dil ki galiyon mein sham se bhaTakte hain chand ke tamannai be-qarar saudai dil-gudaz tariki ruh-o-jaan ko Dasti hai ruh-o-jaan mein basti hai shahr-e-dil ki galiyon mein tak shab ki belon par shabnamin sarishkon ki be-qarar logon ne be-shumar logon ne yaadgar chhorri hai itni baat thorri hai sad hazar baaten thin hila-e-shakebai suraton ki zebai qamaton ki ranai in siyah raaton mein ek bhi na yaad aai ja-ba-ja bhaTakte hain kis ki rah takte hain chand ke tamannai ye nagar kabhi pahle is qadar na viran tha kahne wale kahte hain qarya-e-nigaran tha KHair apne jine ka ye bhi ek saman tha aaj dil mein virani abr ban ke ghir aai aaj dil ko kya kahiye ba-wafa na harjai phir bhi log diwane aa gae hain samjhane apni wahshat-e-dil ke bun liye hain afsane KHush-KHayal duniya ne garmiyan to jati hain wo ruten bhi aatin hain jab malul raaton mein doston ki baaton mein ji na chain paega aur ub jaega aahaTon se gunjegi shahr-e-dil ki pahnai aur chand raaton mein chandni ke shaidai har bahane niklenge aazmane niklenge aarzu ki gahrai DhunDne ko ruswai sard sard raaton…

Shab Jaaye Kay Man Boodam (Aagha Shorish Kashmiri) / شب جائے کہ من بُودم از آغا شورش کاشمیری

Shab Jaaye Kay Man Boodam (Aagha Shorish Kashmiri) شب جائے کہ من بُودم از آغا شورش کاشمیری خُدا ہے۔۔۔۔ کی سب سے بڑی دلیل تو میرا وجود ہے۔ مجھے زندگی میں جو کچھ مِلا، رزق، اولاد ، عزت ، قلم، بیان یہ سب بارگاہِ ایزدی کے انعامات ہیں۔ یہ چیزیں خدا کے سوا مجھے کوئی نہیں دے سکتا تھا، میں نے اپنے وجود سے اپنے رب کو پہچانا ہے۔ یہ میرے خُدا ہی کا فضل و کرم تھا کہ 1969 میں 5 نومبر سے 18 نومبر تک ارض قران میں رہا۔۔ ایک گُمراہ معصیت اور آلودہ فسق انسان کے لیے اس سے بڑی سعادت کیا ہوگی کہ بیت اللہ اور بارگاہ رسالت میں یاد کیا جائے۔ یہ اللہ تعالی کا لف بے پایاں اور رحمت للعالمین کی کرم گستری تھی کہ ایک روسیاه اس بے پناہ دربار کی حاضری اورحضوری سے مشرف کیا گیا۔ یہ روداد کہنا اور لکھنا سہل نہیں، یہ اس دربار کی روداد ہے جہاں جنیدؒ و بایزیدؒ کے حواس گم ہو جاتے اورشبلی و عطار تکتے رہ جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔